پیار، محبت اور عشق پر ایک خوبصورت تحریر “پیار ویار “

پیار، محبت اور عشق پر ایک خوبصورت تحریر “پیار ویار “

January 8, 2019 | 268 Views

تحریر: انعم امبر وڑائچ، ملتان

دنیا میں کوئی بھی ہو کسی بھی رنگ یا مذہب سے تعلق رکھنے والے لوگوں میں کوئی اور بات مشترکہ ہو یا  نہیں البتہ پیار کا احساس کہیں نہ کہیں ہو تا ہے۔ جی ہاں بالکل آپ دنیا کے کسی بھی کونے میں چلے جائیں پیار کا ایک سا جذبہ موجود ہوتاہے جو دیکھنے سے  تعلق رکھتاہے۔ آپ ضرور سوچ رہے ہوں گے کہ دنیا میں تمام مائیں اپنے بچوں سے پیار کرتی ان کی ممتا میں کوئی فرق نہیں اسی طرح دیگر رشتے بھی ہیں لیکن معاف کیجیے گا ، میں اس پیار، محبت ، عشق ،دیوانہ پن،  جنون  کی بات کر رہی ہوں جو ہمارے معاشرے  میں کسی خطرناک وبا کی طرح پھیل چکی ہے بلکہ لا علاج ہو چکی ہے۔

فرض کریں اگر میں ماں باپ بہن بھائی کے پیار پر لکھ رہی ہوتی تو کتنےلوگ اس پوسٹ سے  ہی اکتاہٹ کا شکار نظر آئیں گے اور کسی اور موضوع کی تلاش محو ہوں گے، ہم سب چاہتے ہیں کہ پیار پر بات ہو  اور کیوں نہ ہوبھئی!!!  پیار تو ہماری قوم میں کوٹ کوٹ کر بھرا ہوا ہے۔  ہم کسی بھی وقت کسی پر بھی پیار نچھاور کرنے کے لئے تیار ہوتے ہیں کیوں کہ ہم اس بات پر بہت دلجمعی سے عمل پیرا ہیں کہ پیار تو کسی بھی وقت کسی سے بھی ہو سکتا،  البتہ اب عشق کو بھی کچھ کچھ نہ کچھ سمجھ گئےہوں گے کہ  عشق کیا ہے؟ جی زندگی میں ایک ہی بار ہوتا ہے اور سچا پیار ہمارا عشق ہی کہلاتاہے۔

یہ مثال مشہور ہے کہ جس کا دوست نہیں وہ نہایت غریب شحص ہے اب جو شحص کسی سے پیار کے حسین بندھن میں نہ بندھا ہو  وہ ہی غریب ہے بلکہ مظلوم تنہا آوارہ دکھی دل کرائے کے لیے خالی ہے ۔ اکیلا ہوں مگر بہت خوش ہوں جیسے مکالمات  اور سٹیٹس لگا کر کسی نہ کسی کی ہمدردی حاصل کرنے کے بعد پیار کی گاڑی پہ سوار ہو کر ایک نئے سفر کی ابتدا کر ہی لیتا ہے ۔

اس طرح ایک اور مثال آپ کے سامنے ہے ملک میں اگر کسی سیاسی پارٹی نے جلسہ اور بلخصوص دھرنا دینا ہو تو نوجوانوں  کو بلانے کی ضرورت نہیں وہ تو خود آن موجود ہوں گے،  کیونکہ آج کل کے دھرنوں سے ملک کو کوئی خاص فائدہ نہ ہوا نقصان ہی ہوا مگر ہمارے نوجوان طبقہ بہت ہی محظوظ ہوا،  اس کی وجہ کسی کی کسی سے آنکھ مل گئی کسی بچارے کاحادثہ دل تک جا پہنچا اور کسی کو شوہر اور گھر تک مل گیا بھئی اس کے پیچھے یہ ہی مہربان پیار کار فرماں ہے ۔ ہمارے ہاں پیار کا کوئی اور انجام ہو نہ ہو شادی کی صورت میں عمر بھر کے لیے سزا ضرور مل جاتی ہے ۔

آخر میں پڑھنے والوں سے دلی معزرت صرف حقیقت واضح  کی گئی ایک مذاق کی صورت میں ۔اسے وہ ہی سیریس لیں جو اس سے متفق باقی ہرگز برا نہ جانیں اور اسے مزاح سمجھ کر اپنا کام یعنی پیار محبت جاری رکھیں ۔

نوٹ: انعم امبر وڑائچ ابھرتی ہوئی شاعرہ ہیں اور ایسے موضوعات پر  لکھنا پسند کرتی ہیں ۔ میگ ون میگزین  کے لیے اکثر اپنا قلم چلاتی رہتی ہیں۔

(ادارہ کا قلم کار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔)

Advertisement